بڑھتے ہی گئے اختلافات مسلسل

مَرا نہیں جو نہ آسکے وہ لوٹ کے

بکتا ہے میرا دل یہ خرافات مسلسل

خدا کا واسطہ! دم لے،  اسے جانے دے!

سراپا التجا ہیں روندے ہوئے جذبات مسلسل

مٹھی میں ریت کب کسی کے قید ہوئی ہے بھلا

پھسلتا ہی گیا میرے ہاتھوں سے اس کا ہاتھ مسلسل

Advertisements

Tagged: , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , ,

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: