معصوم دل کی اک بے ضرر سی آرزو

معصوم دل کی اک بے ضرر سی آرزو ہے

جو طبع نازک پر گراں نہ گزرے تو بیان کردوں

کہ یہ بے ضرر سی جو خواہشیں ہیں

ننھی کلیاں ہیں تتلیاں ہیں

رنگ برنگے پھولوں کی خوشبوئیں ہیں

حال ان کا جو پوچھو کسی عاشق بے ضرر سے

تو معصوم سے بے ضرر سے دل کی

یہ خواہشیں ہی تو راحتیں ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بہار آئی بہار آئی

اک ننھی خواہش نے لی انگڑائی

پھر پنپ پڑی ہے ویران دل کے

اجاڑ آنگن کے تاریک کونے میں

اک معصوم سی بے ضرر سی خواہش

کہ اذن ہو تو چھپا کے رکھ لوں

میں آپ کی اس نظر کو جاناں

جو عطا ہوئی تھی۔۔۔دل میں اپنے بسا کے رکھ لوں

میں آپ کی اس نظر کو جاناں

جو اذن ہو تو چھپا کے رکھ لوں

Advertisements

Tagged: , , , , , , , , , , , ,

2 thoughts on “معصوم دل کی اک بے ضرر سی آرزو

  1. SaboohiAhmad 10 AMpWed, 20 May 2015 00:17:42 +000017Wednesday 2013 at 12:17 am Reply

    Waahh…
    Bohat Khoobsurat!
    I like the rhythm & flow of ur poem.

  2. SaboohiAhmad 10 AMpWed, 20 May 2015 00:19:59 +000019Wednesday 2013 at 12:19 am Reply

    Reblogged this on saboohiahmad and commented:
    I like The rhythm & flow…
    Beautiful.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: